کتنے بے درد ہیں ،، صَرصَر کو صبا کہتے ہیں

کیسے ظالم ہیں ، کہ ظُلمت کو ضیا کہتے ہیں

جبر کو میرے ،،، گناہوں کی سزا کہتے ہیں
میری مجبوری کو، تسلیم و رضا کہتے ہیں

غم نہیں گر،،،،،،، لبِ اظہار پر پابندی ہے
خامشی کو بھی تو اِک طرز ِ نوا کہتے ہیں

کُشتگان ِ ستم و جَور کو بھی دیکھ تو لیں
اہل ِ دانش ،،،، جو جفاؤں کو وفا کہتے ہیں

کل بھی حق بات جو کہنی تھی سر ِ دار کہی
آج بھی پیش ِ بُتاں،،،،،،،،، نام ِ خدا کہتے ہیں

یُوں تو محفل سے تيری اُٹھ گئے سب دل والے
ایک دیوانہ تھا ،،،،، وہ بھی نہ رہا کہتے ہیں

یہ مسیحائی بھی کیا خوب مسیحائی ہے
چارہ گر ،، موت کو تکمیل ِ شِفا کہتے ہیں

بزم ِ زنداں میں ہُوا شور ِ سلاسل بَرپا
دہر والے اسے پائل کی صدا کہتے ہیں

آندھیاں میرے نشیمن کو،،، اُڑانے اُٹھیّں
میرے گھر آئے گا، طوفان ِ بلا کہتے ہیں

اُن کے ہاتھوں پہ اگر خُون کے چھینٹے دیکھیں
مصلحت کیش ،،،،،،،،،، اسے رنگِ حنا کہتے ہیں

میری فریاد کو ، اِس عہد ِ ہوّس میں ناصر
ایک مجذوب کی ،، بے وقت صدا کہتے ہیں

0
0
0
s2smodern

Add comment


Security code
Refresh